أرشيفات التصنيف: 11ھ حضرت رسول کریم علیہ السلام

حضرت رسول کریم امام المرسلین خاتم النبین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم، وصال مبارک ۱۱ھ

نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم، عمان کے حکمران بھائیوں جیفر اور عبد کے نام

نامہ مبارک حضرت سید الاولین والآخرین خاتم الانبیاء والمرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)

ملک عمان کے دو حکمران بھائیوں جیفر و عبد کے نام، جو جلندی کے بیٹے تھے۔

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم، عمان کے حکمران بھائیوں جیفر اور عبد کے نام

نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام کسریٰ شاہِ فارس

نامہ مبارک حضرت سید الاولین والآخرین خاتم الانبیاء والمرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)

یہ نامۂ مبارک آپ نے کسریٰ شاہِ فارس کو دعوتِ اسلام کے لئے بھیجا۔ فارس (ایران) اس زمانہ کی دو بڑی عالمی طاقتوں میں سے ایک تھی، جبکہ دوسری روم کی سلطنت تھی۔

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام کسریٰ شاہِ فارس

نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام نجاشی

نامہ مبارک حضرت سید الاولین والآخرین خاتم الانبیاء والمرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)

یہ نامۂ مبارک آپ نے نجاشی شاہِ حبشہ (وفات رجب ۹ھ) کو دعوتِ اسلام کے لئے بھیجا۔ اس نجاشی کا نام اصحمہ بن ابجز تھا۔

یہ خط عمرو بن امیہ ضمیری لے کر گئے تھے۔ جب یہ خط نجاشی کو ملا تو اس نے اس کو اپنی آنکھوں پر رکھا اور تخت سے اتر کر زمین پر بیٹھ گیا۔ اسلام قبول کیا، حق کی شہادت دی، ہاتھی دانت کا ڈبہ منگوا کر اس میں نامۂ مبارک کو رکھا اور کہنے لگا کہ جب تک یہ خط حبشہ میں رہے گا اہل حبشہ بخیریت رہیں گے۔ (خطوط ہادیِ اعظم)

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام نجاشی

نامہ مبارک حضرت سید المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام منذر بن ساویٰ

نامہ مبارک حضرت سید الاولین والآخرین خاتم الانبیاء والمرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)

بنام منذر بن ساویٰ، جو بحرین (عرب کا مشرقی ساحلی علاقہ) کا ایرانی گورنر تھا۔ اس کی خوش نصیبی کہ اس نے یہ نامۂ مبارک ملنے کے بعد اسلام قبول کیا۔

صحیح بخاری میں حضرت ابن عباس سے مروی ہے کہ مسجدِ نبوی کے بعد سب سے پہلے بحرین کی جامع مسجد میں جمعہ ادا کیا گیا جو اثا شہر میں واقع تھی۔ (صحیح بخاری، کتاب الجمعہ)

مندرجہ نامۂ مبارک، جس کا عکس دستیاب ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے منذر بن ساویٰ کو اس کے خط کے جواب میں عنایت فرمایا، جس خط میں اس نے اپنے مسلمان ہونی کی اطلاع دے کر آپ سے آئندہ سلطنت کے امور کے سلسلہ میں ہدایت جاری کرنے کی درخواست کی تھی۔

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت سید المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام منذر بن ساویٰ

نامہ مبارک حضرت محبوب رب العالمین صلی اللہ علیہ وسلم بنام مُقَوقس

نامہ مبارک حضرت محبوبِ رب العالمین خاتم الانبیاء والمرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)

بنام جریج ابن مینا، لقب مقوقس، جو اسکندریہ (مصر) میں قبطیوں کا عیسائی حاکم تھا۔ یہ خط آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابی حضرت حاطب بن ابی بلتعہ رضی اللہ عنہ نے مقوقس کو پہنچایا۔

یہ نامۂ مبارک ۱۸۵۰ کے زمانے میں فرانس کے ایک مستشرق کو مصر میں اخمیم کے مقام پر ایک راہب سے ملا تھا۔ بعد میں سلطان عبد المجید خان اول نے تین سو اشرفیوں میں خرید لیا تھا۔ آجکل یہ مبارک خط استنبول کے ٹوپکپی محل عجائب گھر میں محفوظ ہے۔

صاحبِ مصباح المضی نے واقدی کے حوالے سے لکھا ہے کہ مقوقس کے نام بھیجا جانے والا یہ نامۂ مبارک حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے تحریر کیا تھا۔ (مکتوباتِ نبوی)

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت محبوب رب العالمین صلی اللہ علیہ وسلم بنام مُقَوقس

نامہ مبارک حضرت امام المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام ہِرَقل قیصرِ روم

نامہ مبارک حضرت امام المرسلین سید الانبیاء صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (وصال مبارک ۱۱ھ)، بنام ہرقل قیصرِ روم

یہ نامہ مبارک آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سلطنتِ روم کے شہنشاہ ہرقل کی طرف اسلام کی دعوت دینے کے لئے لکھا۔

آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ نامۂ مبارک اردن کے شاہ حسین کو اپنے دادا سے ملا تھا اور لندن کے ماہرین نے اس کو اصل قرار دیا۔ اس کا عکس مختلف کتبِ سیرت میں شایع ہو چکا ہے۔ ڈاکٹر حمید اللہ صاحب نے ۱۹۵۵ میں اس کی اصل فرانسیسی رسالہ ARABICA میں شائع کرائی تھی۔

متابعة قراءة نامہ مبارک حضرت امام المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم بنام ہِرَقل قیصرِ روم