مکتوب شیخ عثمان جالندھری: بنام مغل شہنشاہ شاہجہان

مکتوب شریف حضرت خواجہ شیخ عثمان جالندھری نقشبندی رحمۃ اللہ علیہ، خلیفہ حضرت خواجہ محمد باقی باللہ دہلوی نقشبندی احراری قدس سرہ

بنام مغل شہنشاہ شاہجہان، عدل و انصاف قائم کرنے اور سخاوت کی نصیحت کے بیان میں۔

زبان: فارسی

اردو ترجمہ: مولوی محمد الٰہ دین حنفی نقشبندی مجددی

حوالہ: ملک فضل الدین ملک چنن الدین ملک تاج الدین ککے زئی، تاجران کتب قومی، کشمیری بازار، لاہور

مکتوب شریف نیچے شروع ہوتا ہے:


بسم الله الرحمٰن الرحيم

لا الٰہ الّا اللہ کے برگزیدہ اور محمد رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) کی درگاہ کے آراستہ بندگانِ حضرت ظل الٰہی شاہنشاہ شاہجہان بادشاہ غازی، ہمیشہ ہو ملک اس کا اور باقی رکھے اللہ تعالیٰ اس کو۔ ہمیشہ حق سبحانہٗ تعالیٰ کے فضل و رحمت اور حمایت میں ”نصر من الله وفتح قريب“ عنقریب روزی ہو۔ آمين رب العالمين۔

چونکہ محض عنایتِ الٰہی سے آپ دین محمدی صلی اللہ علیہ وسلم کی مددگاری کی توفیق کے مظہر ہوئے ہیں، اللہ تعالیٰ کی بے نہایت مہربانیوں سے یہ امید ہے کہ عنقریب ہی ”ان تنصر الله ينصركم“ کی جزا سے آپ مشرف ہوں گے اور ظاہری اور باطنی دشمن مغلوب ہو جائیں گے۔ اور مقصود حقیقی کے سوا غیر کی طرف توجہ کرنے سے نجات پا کر حضور اقدس کی طرف ہمیشہ آپ کا خیال رہے گا۔

نیاز کے بعد اس فقیر کی التماس یہ ہے کہ چونکہ بادشاہ اخلاقِ الٰہی کا مظہر ہیں، اس لئے امید ہے کہ شہروں کے محاصلات کے امور کے قوانین، عدل اور انصاف اس طور پر سر انجام ہوں گے، کہ کوئی شخص کسی پر ظلم و تعدی نہ کر سکے گا۔ اور انعام کے فیض سے عام طور پر سخاوت اور احسان کا دریا اس طرح موجزن ہوگا کہ تمام مسلمان مرد اور عورتیں آمدنی و روزی سے بے فکر ہو کر دلجمعی سے اصلی مقصد کا قصد کریں گے، اور حقیقت میں بندگی کے وظائف ادا کرنے میں شہود کے وصف سے مشرف ہوں۔ جیسا کہ ہمارے رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے:

الإحسان ان تعبد الله كأنك تراه

(احسان اس بات کا نام ہے کہ اللہ تعالیٰ کی اس طرح عبادت کرے کہ گویا تو اسے دیکھتا ہے)

تا کہ ان معنوں کی صفات کے ظہور کی برکت سے

”إن رحمة الله قريب من المحسنين“

(بے شک اللہ تعالیٰ کی رحمت نیکی کرنے والوں کے نزدیک ہے)

کے آثار ذات اقدس پر پَرتو ڈالیں۔ پھر یقین ہے کہ آپ مردانِ خدا رضی اللہ عنھم و رضو عنہ کے میدان سے نیک بختی کی گیند لے جائیں گے۔ ابیات

به احسان خاطرِ مردم شو و شاد
به تقویٰ خانۀ دین گردد آباد

(احسان کرنے سے لوگوں کے دل خوش ہوتے ہیں، اور پرہیز گاری سے دین کا گھر آباد ہوتا ہے)

به سوئی این صفت ها گر شتابی
رضای خلق و خالق هر دو یابی

(اگر تو ان صفات کی طرف جلدی کرے گا تو خدا اور خلقت دونوں کی رضامندی تجھے حاصل ہو گی)

امید ہے کہ دونوں جہان کی سعادت حاصل کرنے کے لئے آپ اور تمام مسلمان اس کو قبول کریں گے۔ بیت

بر آوردن کام امیدوار
به از قید بندی شکستن هزار

(کسی امیدوار کا کام پورا کرنا، ہزار قیدی کی قید چھڑانے سے بہتر ہے)

چونکہ حق سبحانہٗ تعالیٰ بادشاہوں کو عدل اور انصاف کی بابت زیادہ پرسش کرے گا، اس لئے آپ کو مناسب ہے کہ اس کام کو اپنا حصہ بنا لیں، اور جو کچھ اہل اللہ کے برخلاف ہے اوس سے منہ پھیر لیں، تا کہ آپ کی نیکنامی اور خوبی سے تمام جہان باغ بن جائے۔ چنانچہ پیغمبرِ خدا صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں:

النَّاسُ عَلىٰ دِينِ مُلُوكِهِم

(لوگ اپنے بادشاہ کے دین پر ہوتے ہیں)

اللہ تعالیٰ توفیق عنایت فرمائے۔ آمين يا رب العالمين۔

أضف تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *