مکتوب خلیفہ محمود نظامانی ۷۸۔ فقیر غلام علی نظامانی ٹنڈو قیصر والے کی طرف

مکتوب شریف حضرت شیخ خلیفہ محمود نظامانی سندھی قادری نقشبندی رحمۃ اللہ علیہ (وفات ۱۲۶۷ھ)، خلیفہ اعظم سید محمد راشد شاہ المعروف پیر سائیں روضے دھنی قدس سرہ

فقیر غلام علی نظامانی، ٹنڈو قیصر والے کی طرف ان کے خط کے جواب میں لکھا گیا، جس میں لکھا تھا کہ سرکاری افسران تنگ کرتے ہیں اور ہر سرکاری افسر شریر ہوتا ہے۔

حوالہ: مکتوبات شریف حضرت خلیفو محمود فقیر (سندھی ترجمہ)، مترجم مولانا عبدالحلیم ہالیپوٹو، محمودیہ اکیڈمی، ضلع بدین، سندھ، 2003

اردو ترجمہ از طالب غفاری

مکتوب شریف نیچے شروع ہوتا ہے:


محب مخلص، خاص دوست، متحد دل و جان، برادر مہربان، ہمیشہ در امن و امان، میاں غلام علی خان، رب کریم آپ کو سلامت رکھے۔

سلام کے بعد جو نبی کریم سرور کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت  ہے، واضح ہو کہ آپ برادران کا محبت بھرا خط ملا، بہت خوشی حاصل ہوئی۔ خط کا جملہ مضمون پڑھا گیا اور فقراء کی جمیع جماعت سے آپ کے لئے بارگاہ الٰہی میں دعا کرائی گئی۔ اللہ تعالیٰ اپنے خاص فضل و کرم اور مہربانی سے قبول فرمائے۔

آپ نے لکھا ہے کہ سرکاری افسران آپ کو تنگ کرتے ہیں اور ہر ایک سرکاری افسر شریر ہوتا ہے۔ اس کے لئے عرض یہ کہ پیارے! یہ سب فتنے اور شرارتیں ہمارے نفس شوم کی ہیں اور ہمارے ہی اعمال کی شامتیں ہیں جو سرکاری افسروں کی صورت میں ظاہر ہورہی ہیں۔ کسی بزرگ نے کہا ہے کہ

بیت فارسی

نفس چوں نیست در دروں باقی
چہ غم از دشمنانِ آفاقی

ترجمہ: جب نفس ہی اندر میں نہ رہے گا تو آفاقی (باہر کے) دشمنوں سے کیا ڈر؟

علاج یہ ہے کہ دل و جان سے اللہ تعالیٰ کی بارگاہ کی طرف رجوع کریں کہ رب کریم اعمال کی اس بدصورت کو اچھی صورت میں بدل دے۔ ہمارے مرشد حضرت پیر صاحب روضہ والے فرماتے تھے کہ اگر کسی شخص پر حاکم ظلم کرے یا کسی اور سے کوئی تکلیف پہنچے تو اسے چاہیے کہ اپنے بد اعمال کی طرف توجہ کرے اور پھر ہر ایک گناہ سے توبہ کرے اور تائب ہو کہ رب رحیم رحم فرمائے۔

والسلام۔ مکمل ہوا کلام۔ کاتب کا کام مکمل ہوا، شیطان کا منہ کالا ہوا۔ الحمدللہ علیٰ ذالک

أضف تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *