استغاثہ بدرگاہ رسالت مآب صلّ اللہ علیہ وسلم، عربی، فارسی اور دیگر زبانوں میں

اس مضمون میں یہ عاجز اولیاء کرام کی شاعری سے ایسے اشعار جمع کرنے کی کوشش کرے گا جن میں انہوں نے اپنے آقا و مولا آنحضرت صلّی اللہ علیہ وسلم کی بارگاہ عظمت پناہ میں استغاثہ کی صورت میں اپنی مناجات و عرضداشت پیش کی ہیں۔

This is a collection of verses said by the Awliya of Islam in which they have directly called upon the Master of the Universe ṣallAllāhu ʿalayhi waSallam and asked for help and support from his grand court. These verses are in Arabic, Persian, Urdu and other languages.

ya-rasul-allah

العربية، عربی

ال‏إمام الشقراطيسي المغربي، 496ھ

وقال الإمام أبو محمد عبد الله بن أبي زكريا الشقراطيسي المغربي المتوفى سنة ۴۹۶: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا صفوة الله قد واصلت فيك صفا
صفو الوداد بلا شوب ولا دخل

ألست أكرم من يمشي على قدم
من البرية فوق السهل والجبل

وأزلف الخلق عند الله منزلة
إذ قيل في مشهد الإشهاد والرسل

قم يا محمد فاشفع في العباد وقل
يسمع وسل تعط واشفع عائداً وسل

أبو مدين المغربي، 594ھ

قال سيدي الشيخ أبو مدين شعيب بن الحسين الأنصاري المغربي رضي الله عنه، خليفة سيدنا الغوث الأعظم السيد عبد القادر الجيلاني البغدادي: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا خير مبعوث وأكرم شافع
كن منقذي من هول يوم مرجف

صلى عليك الله يا خير الورى
ما لاح برق في السماء وما خفى

الإمام يحيى الصرصري الحنبلي، 656ھ

وقال الإمام يحيى الصرصري الحنبلي المتوفى سنة ۶۵۶: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا حبيب الرحمن في الخلق يا من
تعرف الأرض فضله والسماء

يا كريم الآباء ثمت زادت
شرفاً سامياً بك الآباء

‏أنت ذخر لنا وعون على خطـ
ـب زمان به اللبيب يساء

فأغثني وكن لضعفي مجيراً
في مقام تخافه الأتقياء

واصل الله بالمواهب مغنا
ك ودامت بربعك النعماء

الشيخ قلقشندي المصري، 821ھ

وقال الشيخ القلقشندي المصري ولعله شهاب الدين أحمد بن علي القلقشندي الشافعي المتوفى سنة ۸۲۱: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا خير من دفنت بالقاع أعظمه
أنت المراد وأنت القصد والسول

أنت الذي لم يخف في الناس قاصده
وليس عندك تسويف وتسويل

قصدت جاهك لا أرجو سواك ولي
في باب عزك ترديد وتطفيل

أنفقت عمري في لهو وفي لعب
وليس لي غير هذا الجاه تحصيل

وليس لي عمل أرجو النجاة به
والعفو عند رسول الله مأمول

ولن يضيق رسول الله جاهك بي
فإنه لجميع الخلق مبذول

الإمام كمال الدين بن الزملكاني الشافعي، 727ھ

وقال ال‏إمام كمال الدين بن الزملكاني الشافعي المتوفى سنة ۷۲۷، وهو معاصر لابن تيمية، وألف كتاباً في الرد عليه في مسألة الزيارة والاستعاثة: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا صاحب الجاه عند الله خالقه
ما رد جاهك إلا كل أفاك

أنت الوجيه على رغم العدا أبدا
أنت الشفيع لفتاك ونساك

يا فرقة الزيغ لا لقيت صالحة
ولا شفي الله يوماً قلب مرضاك

ولا حظيت بجاه المصطفى أبدا
ومن ‏أعانك في الدنيا ووالاك

يا أفضل الرسل يا مولى الأنام ويا
خير الخلائق من ‏إنس وأملاك

ها قد قصدتك أشكو بعض ما صنعت
بي الذنوب وهذا ملجأ الشاكي

قد قيدتني ذنوب عن بلوغ مدى
قصدي إلى الفوز منها فهي أشراكي

فاستغفر الله لي واسأله عصمته
فيما بقي وغنى من غير  إمساك

عليك من ربك الصلاة كما
منا عليك السلام الطيب الزاكي

الإمام عبد الرحيم البرعي اليمني، 903ھ

وقال الإمام عبد الرحيم البرعي اليمني المتوفى سنة ۹۰۳ وقد ذكرت في المجموعة خطأ أنه من أهل القرن الخامس: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

أجب يا ابن العواتك صوت عبد
أسير الذنب فيه لك الولاء

تداركني بجاهك من دنوب
وأوزار يضيق بها الفضاء

وكن لي ملجأ في كل حال
فليس إلى سواك لي التجاء

فإن أكرمتنا دنيا و أخرى
فليس البحر تنقصه الدلاء

عليك صلاة ربك ما تراءت
نجوم الجو أو عصفت رخاء

الشيخ عبد الغني النابلسي القادري النقشبندي الحنفي، 1143ھ

قال سيدي الشيخ عبد الغني النابلوسي: (شواهد الحق في الإستغاثة بسيّد الخلق)

يا بهجة الكون يا طه الرسول ومن
له مقام عظيم كله أدب

يا سيد الأنبياء والرسل أجمعهم
يا من به زال عنا الهم والتعب

يدعوك مسكينك العبد الذي بطشت
أيدي العباد به والقلب مكتئب

فاكشف له كربة أودت بمهجته
يا خير من كشفت عنا به الكرب

وما دعوناك في تفريج شدتنا
إلا لأنك في تفريجها سبب

وأنت باب العطا والجود يا أملي
بك الإله على طول المدى يهب

صلى عليك الذي أهداك تكرمة
للخلق تقضي بك الأيام ما يجب

وقال العارف النابلسي رحمه الله، وليست في المجموعة:

يا أشرف الرسل ضاقت فارسل الفرجا
فإنني لك قد أضمرت ألف رجا

أنت الحبيب الذي في القلب منزله
ومن محبته تستملك المهجا

وأنت ملجؤنا في كل حادثة
من يلتجي لك ياسر الوجود نجا

أنت الرسول إلينا والشفيع بنا
يوم القيامة من أن نصطلي الوهجا

وأنت فضلتنا قدراً على أمم
مضت وعنا رفعت الإصر والحرجا

لولاك لولاك ما الأفلاك قد خلقت
والناس لولاك كانوا كلهم همجا

يا أشرف الرسل من أشكو الزمان له
إن لم تكن لي إذا خطب الزمان رجا

يا ‏أشرف الرسل أثقال الذنوب بنا
‏أودت وقد تركتنا نخبط اللججا

يا أشرف الرسل مشتاق أضرّ به
طول العباد وقاسي بالنوى وهجا

فكن لعبد الغني عوناً وكن سنداً
فإنه في حم‏ى الإسلام قد ولجا

وكن له شافعاً يوم الزحام فقد
أضحى بمدحك ما بين الورى لهجا

صلى وسلم مولانا عليك بلا
نهاية ما أتى صبح وزال دجى

وقال العارف النابلسي أيضاً، وليست في المجموعة:

يا سيد الشفعا يا أكرم الكرما
يا أرأف الرحما يا غوث كل شجى

يرجوك عبد على الأعتاب مطرح
ذو مدمع بذنوب الذنب ممتزج

أغث أغث يا رسول الله أنت لها
فعقدة الخطب قد ضاقت عل‏ى الودج

لا تهملني بأرض يا أنيس بها
بكربها القلب في ران وفي وهج

وكن شفيعي في يوم ترى صحفي
منشورة بذنوب أثقلت ثبجي

النوق حنت لقبر قد ثوبت به
ما عذر القلب ألى مثواك لم يهج

متى أرى العيس تطوى البيد بي مرحا
وأنظر الروضة الفيحاء منعرجي

ما خاب من حط أحمال الرجاء لدى
ذاك الجناب الرفيع الأفيح الفرج

فأنت لا شك باب الله أي فتى
أتاه من غير هذا الباب لم يلج

وما ذكرتك في بهماء داجية
إلا تنفس صبح الخطب بالفرج

إن الكريم مع الإملاق محتفل
بكل ما ناب راجيه من الحوج

فكيف ترتاب في بحر مواهبه
نرى عزاليها منحلة الشرج

خزائن الخالق الرزاق في يده
وفضله الجمّ مبذول لمنتهج

صلى عليه إله العرش ما صدحت
حمامة بلسان بالجوى لهج

والآل والصحب ما زانت مدائحه
بيض الطروس ازديان العين بالدعج

وقال العارف النابلسي، وليست في المجموعة:

يا غياثي في المهمات ويا
من به نلت الهدى والرشدا

يا أبا القاسم يا قاسم ما
وهب الله عل‏ى طول المدى

يرتجي عبد الغني من حبكم
زورة ثانية تشفي الردى

وبها يظفر بالمأمول من
ربه في ظل عيش السعدا

ويرى من كل ضيق فرجاً
ويفي الحظ له ما وعدا

وقال سيدي العارف بالله الشيخ عبد الغني النابلسي رحمه الله تعالى‏، و ليست في المجموعة:

ألا يا رسول الله يا أشرف الورى
ومن ليس في العليا له من ينازع

ويا غوثنا في كل ضيق وشدة
ويا من لنا يوم القيامة شافع

ويا ملجئي يا مقصدي يا وسيلتي
ويا سندي سيدي أنت نافع

إذا كنت لي في كل أمر ملاحظاً
فما أنا متعوب ولا أنا ضائع

تجلى بك الرحمٰن في كل مظهر
علينا فمتبوع كما أنت تابع

لأنك نور كنت من نور ربنا
ظهرت لنا والكلّ منك بدائع

عليك صلاة الله ثم سلامه
بغير انقطاع لم يزل يتتابع

فارسی

غوث اعظم شیخ عبدالقادر جیلانی، 561ھ

حضرت غوث الثقلین سرتاجِ اولیاء قطب الاقطاب سیدنا و مرشدنا و وسیلتنا سید عبد القادر جیلانی بغدادی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اپنے آقا و مولا علیہ الصلوات والتسلیمات کی شان میں اس طرح گویا ہیں: (بحوالہ شرح دیوان غوث اعظم، از محمد علی چراغ)

غلام حلقه بگوشِ رسول و ساداتم
زهے نجات نمودن حبیب آیاتم

(میں رسول اکرم ﷺ اور جملہ سادات کا دست بستہ غلام ہوں۔ ہماری نجات کے لیے یہ کتنی محبوب نشانیاں موجود ہیں۔)

کفایت است ز روحِ رسول و اولادش
همیشه در دو جهاں جملۀ مهمّاتم

(رسالت مآب ﷺ اور آپؐ کی اولاد کی ارواح فتوح، دونوں جہاں کے امور کے لیے اور جملہ مہمات کے لیے کفایت کرنے والی ہیں۔)

ز غیر آلِ نبی حاجتے اگر طلبم
روا مداری کے از هزار حاجاتم

(اگر میں آلِ نبیؐ کے وسیلہ کے بغیر اپنے پروردگار سے مانگوں تو ایک ہزار حاجتوں میں سے ایک بھی حاجت پوری نہ ہو۔)

دلم ز حبِّ محمد پُر است و آلِ مجید
گواهِ حالِ منست ایں همه حکایاتم

(میرا دل حبِ محمدﷺ اور آپؐ کی برگزیدہ آل کی محبت سے معمور ہے۔ میرا حال اور کیفیت میرے اس فلسفے اور عقیدت پر گواہ ہے۔)

چوں ذرّه ذرّه شود ایں تنم بخاکِ لحد
تو بشنوی صلوات از جمیع ذرّاتم

(جب قبر میں میرا تن خاک میں ذرہ ذرہ ہو جائے گا تو اے دنیا والو! تم میرے جسم کے تمام ذرات خاکی سے صلوٰۃ کی آوازیں سنو گے۔)

غلامِ خادمِ خدامِ خاندانِ تو ام
ز خادمی تو دانم بود مهاباتم

(یا نبی اللہ! میں آپؐ کے خاندان کے خادموں کے خادم کا بھی غلام ہوں۔ مجھے جو یہ عظیم الشان رتبہ ملا ہے وہ اسی غلامی کے باعث ملا ہے۔)

سلام گویم و صلوات با تو هر نفسے
قبول کن بکرم ایں سلام و صلواتم

(یا نبی اللہ! میں ہر سانس کے ساتھ اور ہر دم آپؐ پر درود و سلام پڑھتا ہوں۔ اسے از راہِ لطف و کرم قبول فرما لیجئے۔)

گناه بے حد من بیں تو یا رسول اللّٰه!
شفاعتے بکن و محو کن خیالاتم

(یا رسول اللہ! میرے گناہ بے حد و حساب ہیں، میں ان پر نادم اور پشیمان ہوں۔ آپ ہی میری شفاعت کیجئے اور میری پریشانیوں کو ختم کیجئے۔)

ز هر که بدتر ازو نیست من ازو بترم
ندانم اینکه بتو چوں شور ملاقاتم

(میں اپنے آپ کو ہر بدتر انسان سے بھی برا سمجھتا ہوں۔ نادم ہوں کہ آپؐ سے ملاقات پر کس طرح منہ دکھاؤں گا۔)

ز نیک و بد همه داند که من محمدی ام
خلائقے که کند گوش بر ملاقاتم

(ہر اچھا اور برا آدمی جانتا ہے کہ میں محمدی ہوں۔ رسالت مآب ﷺ کا غلام ہوں۔ اسی لیے ملاقات پر لوگ میری باتوں پر توجہ دیتے ہیں۔)

بگوئی محؔی که بهرِ نجات می گویند
درودِ سرورِ کونین در مناجاتم

(اے محی الدین! اپنی مناجاتوں میں تم بھی سرورِ کونینﷺ پر درود و سلام پڑھو، کیونکہ دیگر لوگ بھی مشکلات سے نجات کی خاطر یہی درود ہی پڑھتے ہیں۔)

خواجہ قطب الدین بختیار کاکی، 633ھ

حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمۃ اللہ علیہ (وفات 633ھ) جو حضرت خواجہ غریب نواز معین الدین چشتی اجمیری قدس اللہ سرہ کے خلیفۂ اعظم تھے، اپنے دیوان مسمیٰ دیوانِ کاکی میں اپنے اور دو جہاں کے آقا علیہ الصلواۃ والسلام کو اس طرح پکارتے ہیں:

یا محمد مهر و مه را نور چون روئی تو نیست
کور بادا آنکه او را چشم دل سوئی تو نیست

آخری شعر میں آپ نے اپنے عشق کا اظہار یوں فرمایا ہے:

یا محمد هر کسی را کعبه جای دیگر ست
قطبِ دین را کعبۀ مقصود جز کوئی تو نیست

ترجمہ: اے محمد صلّی اللہ علیہ وسلم! ہر ایک کا کعبہ کسی نہ کسی جگہ ہوتا ہے، قطبِ دین کا کعبۂ مقصود تیرے کوچہ کے سوا اور کوئی نہیں۔

خواجہ بو علی قلندر، 724ھ

حضرت شیخ ابوعلی شرف الدین پانی پتی نعمانی چشتی المعروف بو علی قلندر رحمۃ اللہ علیہ (۷۲۴ھ) اپنے شفیع و حبیب صلّ اللہ علیہ وسلم کی خدمت بابرکت میں اس طرح فریاد کناں ہیں:

فدائے روئے تو ارضین و افلاک
بفرقِ تو منوّر تاجِ لَولاک

بکش از رخ نقاب اے ماهِ یثرب
بزن در جیب و دامانِ دلم چاک

بنیگن آتشے در سینۂ من
کہ سوزد خرمنِ صبرِ مرا چاک

ہمے نالم کہ بر رُو کَے بمالم
ز راہِ تو اگر یابم کفِ خاک

بیا برقِ جمالِ خویش افگن
وجودِ من بود چون خار و خاشاک

بزن تیغے مرا بر سر ز غمزہ
مکن رحمے مرا بر جانِ غمناک

چو سوزم ز آتشِ ہجرِ تو ہر دم
نباشد ز آتشِ دوزخ مرا باک

حُدی خوان خواند از نعتِ تو یکدم
شود جمّازۂ من چست تو چالاک

به جيب و دامنش صد چاک دارد
قلندر بُو علي يهواک يهواک

خواجہ  بہاء الدین نقشبند بخاری، 791ھ

حضرت خواجۂ جہاں قطبِ زماں سیدنا و مرشدنا حضرت خواجہ بہاء الدین نقشبندبخاری رضی اللہ تعالیٰ عنہ (۷۹۱ھ):

مفلسانیم آمده در کوئے تو
شَیئًا لِلّٰه از جمالِ روئے تو

دست بکشا جانبِ زنبیلِ ما
آفریں بر همتِ بازوئے تو

ترجمہ: (اے محبوبﷺ!) ہم مفلس و غریب لوگ تیرے کوچے میں آئے ہیں۔ اللہ کے لئے اپنے چہرے کے حسن و جمال سے کچھ حصہ ہمیں بھی عطا فرما۔ ہماری زنبیل کی طرف اپنا ہاتھ کھول (یعنی کچھ عطا فرما)، تیرے بازوؤں کی ہمت پر آفرین ہو۔

مولانا عبدالرحمٰن جامی، 898ھ

حضرت مولانا نور الدین عبد الرحمٰن جامی نقشبندی ہروی رحمۃ اللہ علیہ (۸۹۸ھ) ایک عظیم عالم، محقق، شاعر و صوفی تھے۔ آپ کا عشقِ رسول دنیائے اسلام میں مشہور و معروف ہے۔ آپ اپنے حبیب صلّی اللہ علیہ وسلم کی بارگاہ عفت پناہ میں اس طرح فریاد کرتے ہیں۔

نسیما جانب بطحا گذر کن
ز احوالم محمدؐ را خبر کن

توئی سلطان عالم یا محمدؐ!
ز روئے لطف سوئے من نظر کن

ببر ایں جانِ مشتاقم بہ آں جا
فدائے روضۂ خیر البشر کن

مشرف گرچہ شد جامؔی ز لطفش
خدایا ایں کرم بار دگر کن​

ایک اور مشہور نعت میں آپ اپنے آقا و مولا علیہ الصلواۃ والسلام کو پُردرد انداز میں پکارتے ہیں۔

تنم فرسوده جان پاره ز هجراں يا رسول الله
دلم پژمردہ آواره ز عصياں يا رسول الله

زجام حب تو مستم با زنجیر تو دل بستم
نمی گویم که من هستم سخنداں يا رسول الله

ز کرده خیش حیرانم سیاه شد روز عصیانم
پشیمانم پشیمانم پشیماں یا رسول اللہ

چو بازوئے شفاعت را كشاني بر گناهگاراں
مكن محروم جاميؔ را در آنجا يا رسول الله

مرزا مظہر جانِ جاناں، 1195ھ

حضرت شمس الدین حبیب اللہ مرزا مظہر جانِ جاناں شہید دہلوی نقشبندی مجددی (م۱۱۹۵ھ) رحمۃ اللہ علیہ کی مشہور نظم:

خدا در انتظارِ حمدِ ما نیست
محمدؐ چشم بر راهِ ثنا نیست

خدا مدح آفرینِ مصطفیٰ بس
محمدؐ حامدِ حمدِ خدا بس

مناجاتے اگر باید بیاں کرد
به بیتے هم قناعت می تواں کرد

محمدؐ از تو می خواهم خدا را
الٰهی از تو عشقِ مصطفیٰ را

آخری شعر کا ترجمہ: اے محمد! میں آپ سے خدا کو مانگتا ہوں، اور اے خدا میں تجھ سے عشقِ مصطفیٰ!

خواجہ غلام محی الدین قصوری، 1270ھ

حضرت خواجہ غلام محی الدین قصوری نقشبندی مجددی رحمۃ اللہ علیہ (وفات 1270ھ)، جن کا لقب دائم الحضوری ہے، وہ اپنے آقا و مولا آنحضرت صلّی اللہ علیہ وسلم سے اس طرح فریاد کرتے ہیں:

گناه گارم سیاه کارم شفاعت یا رسول الله
خراب و خسته و خوارم شفاعت یا رسول الله

تُرا ثانی نه شد پیدا نه در دنیا نه در عقبی
توئی دُرّ گِراں یکتا شفاعت یا رسول الله

شها بیکس نوازی کن طبیبا چاره سازی کن
دوائے درد عصیانم شفاعت یا رسول الله

قصوری را حضوری کن دوائے درد دوری کن
دلم تاریک نوری کن شفاعت یا رسول الله

امام احمد رضا خان فاضل بریلی، 1340ھ

اعلیٰ حضرت فاضل بریلی امام احمد رضا خان قادری بریلوی رحمۃ اللہ علیہ کا اردو نعت گوئی میں کوئی ثانی نہیں۔ آپ اپنے آقا و مولا علیہ السلام کی بارگاہِ عظیم میں اس طرح فریاد کرتے ہیں:

بکارِ خویش حیرانم، اغثنی یا رسول اللہ
پریشانم پریشانم اغثنی یا رسول اللہ

ندارم جز تو ملجائے، ندانم جز تو ماوائے،
توئی خود ساز و سامانم، اغثنی یا رسول اللہ

شہا بیکس نوازی کن، طبیبا چارہ سازی کن،
مریضِ دردِ عصیانم، اغثنی یا رسول اللہ

اردو

حاجی امداد اللہ مہاجر مکی، 1317ھ

حضرت حاجی امداد اللہ مہاجر مکّی رحمۃ اللہ علیہ (م۱۳۱۷ھ) اپنے حبیب و طبیب علیہ صلوات اللہ و سلامہٗ کی بارگاہِ عالیشان میں اس طرح فریاد کرتے ہیں: (کلّیاتِ امدادیہ)

یا رسولِ کبریا فریاد ہے، یا محمد مصطفیٰ فریاد ہے

آپ کی امداد ہو میرا یا نبی، حال ابتر ہوا فریاد ہے

سخت مشکل میں پھنسا ہوں آجکل، اے مرے مشکل کُشا فریاد ہے

دردِ ہجراں سے ہے لب پر جاں مری، اب تو گہہ کیجئے دوا فریاد ہے

چہرۂ تاباں کو دکھلا دو مجھے، تم سے اے نورِ خدا فریاد ہے

گردن و پا سے مری زنجیر و طوق، یا نبی کیجئے جدا فریاد ہے

قیدِ غم سے اب چھڑا دیجئے مجھے، یا شہِ ہر دو سرا فریاد ہے

یا نبی احمد کو در پر لو بلا، اس لئے صبح و مسا فریاد ہے

ایک اور نعت شریف میں آپ اپنے درد و غم کو اپنے آقا علیہ السلام کی خدمت میں اس طرح پیش کرتے ہیں:

آپ کی فرقت نے مارا یا نبی، دل ہوا غم سے دو پارا یا نبی

طالبِ دیدار ہوں دکھلائیے، روئے نورانی خدارا یا نبی

حق تعالیٰ کے تم ہی محبوب ہو، کون ہے ہمسر تمہارا یا نبی

دردِ ہجراں کے سبب مجھ سے کیا، صبر و طاقت نے کنارا یا نبی

باغِ جنت سے زیادہ ہے عزیز، مجھ کو وہ کوچہ تمہارا یا نبی

مرتے دم گر دیکھ لوں روضہ شریف، زندگی ہووے دوبارہ یا نبی

لیجئے در پر بلا کب تک پھروں، در بدر یاں مارا مارا یا نبی

چین آتا ہے مرے دل کو تمام، نام لیتے ہی تمہارا یا نبی

ایک اور مشہور نعت میں آپ اپنے آقا و مولا علیہ السلام کو اس طرح پکارتے ہیں:

کر کے نثار آپ پہ گھر بار یا رسول
اَب آ پڑا ہوں آپ کے دربار یا رسول،

عالم نہ متقی ہوں نہ زاہد نہ پارسا
ہوں اُمتی تمہارا گنہگار یا رسول،

اچھا ہوں یا برا ہوں غرض جو کچھ ہوں سو ہوں
پر ہوں تمہارا تم میرے مُختار یا رسول،

کِس طرح آہ میں کروں خدمت میں حال عرض
ہوں خجلتِ گناہ سے سرشار یا رسول،

ذات آپ کی تو رحمت و اُلفت ہے سر بسر
میں گرچہ ہوں تمام خطاوار یا رسول،

کرئیے نہ میرے فعل بُروں پر نگاہ تم
کیجو نظر کرم کی بس اِک بار یا رسول،

جس دن تم عاصیوں کے شفیع ہو کے پیشِ حق
اُس دن نہ بھولنا مجھے زنہار یا رسول،

لیجو خدا کے واسطے اُس دن مری خبر
عصیاں کا میرے جب کھلے اخبار یا رسول،

تم نے بھی گر نہ لی خبر اس حالِ زار کی
اَب جا کہاں بتاؤ یہ ناچار یا رسول،

دونوں جہاں میں مجھ کو وسیلہ ہے آپ کا
کیا غم ہے گرچہ ہوں میں بہت خوار یا رسول،

کیا ڈر ہے اُس کو لشکرِ عصیان و جرم سے
تم سا شفیع ہو جس کا مددگار یا رسول،

گھیرا ہے ہر طرف سے مجھے درد و غم نے آہ
اب زندگی بھی ہو گئی دُشوار یا رسول،

ہو آستانہ آپ کا اِمداد کی جبیں
اور اس سے زیادہ کچھ نہیں دَرکار یا رسول۔

حضرت حاجی امداد اللہ مہاجر مکّی رحمۃ اللہ علیہ آنحضرت صلّی اللہ علیہ وسلم کے دیدار فیض بخش کی التجا آپ علیہ السلام کی بارگاہ عزت پناہ میں اس طرح پیش کرتے ہیں:

ذرا چہرہ سے پردے کو اُٹھاؤ یا رسول اللہ!
مجھے دیدار ٹک اپنا دکھاؤ یا رسول اللہ!

کرو روئے منوّر سے مری آنکھوں کو نورانی،
مجھے فرقت کی ظلمت سے بچاؤ یا رسول اللہ!

اُٹھا کر زُلفِ اقدس کو ذرا چہرہ مبارک سے،
مجھے دیوانہ اور وحشی بناؤ یا رسول اللہ!

شفیعِ عاصیاں ہو تم وسیلۂ بیکساں ہو تم،
تمہیں چھوڑ اب کہاں جاؤں بتاؤ یا رسول اللہ!

پیاسا ہے تمہارے شربتِ دیدار کا عالَم،
کرم کا اپنے اک پیالہ پلاؤ یا رسول اللہ!

خدا عاشق تمہارا اور ہو محبوب تم اُس کے،
ہے ایسا مرتبہ کس کا سناؤ یا رسول اللہ!

چھچیں خجلت سے جا کر پردۂ مغرب میں ماہ و خور،
گر اپنے حُسن کا جلوہ دکھاؤ یا رسول اللہ!

لگے گا جوش کھانے خود بخود دریائے بخشایش،
کہ جب حرفِ شفاعت لب پہ لاؤ یا رسول اللہ!

یقیں ہو جائے گا کفّار کو بھی اپنی بخشش کا،
جو مَیداں میں شفاعت کے تم آؤ یا رسول اللہ!

مجھے بھی یاد رکھیو ہوں تمہارا اُمتی عاصی،
گنہگاروں کو جب تم بخشواؤ یا رسول اللہ!

ہوا ہوں نفس اور شیطاں کے ہاتھوں سے بہت رُسوا،
مرے اب حال پر تم رحم کھاؤ یا رسول اللہ!

اگرچہ نیک ہوں یا بد تمہارا ہو چکا ہوں میں،
تم اَب چاہو ہنساؤ یا رلاؤ یا رسول اللہ!

کرم فرماؤ ہم پر اور کرو حق سے شفاعت تم،
ہمارے جرم و عصیاں پر نہ جاؤ یا رسول اللہ!

جہاز اُمت کا حق نے کر دیا ہے آپ کے ہاتھوں،
بس اب چاہو ڈباؤ یا تراؤ یا رسول اللہ!

مشرّف کر کے مجھ کو کلمۂ طیّب سے اپنے تم،
پھر اب نظروں سے اپنی مت گراؤ یا رسول اللہ!

پھنسا ہوں ہر طرح گردابِِ غم میں ناخدا ہو کر،
مری کشتی کنارے پر لگاؤ یا رسول اللہ!

اگرچہ ہوں نہ لائق دان کے پر امید ہے تم سے،
کہ پھر مجھ کو مدینے میں بلاؤ یا رسول اللہ!

حبیبِ کبریا ہو تم، امامِ انبیاء ہو تم،
ہمیں بہرِ خدا حق سے مِلاؤ یا رسول اللہ!

شرابِ بے خودی کا جام اِک مجھ کو پلا کر اَب،
دوئی کے حرف کو دل سے مٹاؤ یا رسول اللہ!

بہت بھٹکا پھرا میں وادئ فرقت میں جوں وحشی،
کرم فرماؤ اب تو مت پھراؤ یا رسول اللہ!

مشرّف کر کے دیدارِ مبارک سے مجھے اِک دم،
مرے غم دین و دنیا کے بھلاؤ یا رسول اللہ!

خدا کے واسطے رحمت کے پانی سے مرے اگر،
تپِ ہجراں کی آتش کو بجھاؤ یا رسول اللہ!

پھنسا کر اپنے دامِ عشق میں امداد عاجز کو،
بس اب قیدِ دو عالم سے چھڑاؤ یا رسول اللہ!

پیر فضل علی قریشی نقشبندی مجددی، 1354ھ

حضرت مرشد العرب والعجم خواجہ غریب نواز پیر محمد فضل علی قریشی نقشبندی مجددی رحمۃ اللہ علیہ (م۱۳۵۴ھ)

یا محمد مصطفیٰ قربان تیرے نام پر
پاک سچا دین تیرا، ہوں فدا اسلام پر

بہت شیرین و لذیذ و پاک تیرا نام ہے
جو ادب سے نام لیوے لائقِ انعام ہے

کوئی پیدا نہ ہوا تجھ سا نہ ہووے گا کبھی
جو نبی پیدا ہوئے خادم ہوئے تیرے سبھی

تو ہے محبوبِ خدا رب چاہتا ہے تیری رضا
نفس و شیطاں سے بچا لو، ہے یہ میری مدعا

بہت ہی مظلوم عاجز، غرق ہے تقصیر میں
جاوے گا ملکِ عرب میں ہے اگر تقدیر میں

کشش اپنی دو زیادہ دم بدم پاوے کمال
پاس بلواؤ، دکھاؤ یا رسول اللہ جمال

کب ہووے مقبول دل کی اس جنابِ پاک میں
آرزو دیدار کی آگے نہ جاؤں خاک میں

عربی و مکی مدنی نازنینِ کبریا
کشش ہووے تیز چہ حاجت مقناطیس و کہربا

وطن تیرا پاک دیکھوں خوب عیداں جا کروں
جب تلک روضہ نہ دیکھوں آگے ہرگز نہ مروں

یہ قریشی خاک تیرے قدموں کی ہے شوق مند
جا کے تیرے قدموں میں پاوے وہاں قدرِ بلند

خواجہ عبدالغفار نقشبندی مجددی فضلی المعروف پیر مٹھا، 1384ھ

حضرت محمد عبد الغفار فضلی نقشبندی مجددی رحمتپوری رحمۃ اللہ علیہ نے مندرجہ فریاد لکھی ہے جس میں اردو، ہندی، سرائیکی، فارسی اور عربی کا حسین امتزاج ہے:

ز عصیاں رُو سیاہ کردم، اغثنی یا رسول اللّٰه!
ہے تکیہ آپ کا ہر دم، اَغثنی یا رسول اللّٰه!

توئی شافی توئی کافی کرو میری خطا معافی
ز کردۂ خود پشیمانم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

کوئی کہتا ہے بد خویم، تجھے معلوم کیا گویم
رہائی دہ ز آزارم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

عَذَابُ السَّقَرِ مُوصَدَۃٌ فَاِنَّ النَّارَ مُوقَدَۃٌ
فَاِنَّکَ لَا تَذَر فَردًا اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

جہاں سارے دے وچ جانی نہیں کوئی تیرا ثانی
توئی افضل توئی اکرم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

عن الاوجائی یعصمنی ،فلیس من ورىک لی
بسے امیدها دارم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

سنو کھاجہ موری جاری، میں پاپن ہوں دُکھاں ماری
خدارا بس بزاہ گارم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

لکھاں ݙُکھڑے کُھٹݨ دے نہیں، زخم اُلڑے چُھٹݨ دے نہیں
ݙِکھا یک بار دیدارم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

ذرا روئے دکھا جانا، جنازے میں تو آ جانا
قبر میں توں رکھیں پِرتم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

(حضرت) عبدُ الغفّار گریانم بفرقت سینہ بریانم
وَنجایو مونجھ تے ہر غم اَغِثنی یا رسول اللّٰه!

سنڌي، سندھی

شاہ عبداللطیف بھٹائی قادری، 1165ھ

سندھی زبان کے عظیم صوفی شاعر اور درویش حضرت سید عبداللطیف بھٹائی قادری سندھی رحمۃ اللہ علیہ اپنے حبیب علیہ الصلواۃ والسلام کو مدد کے لئے اس طرح پکارتے ہیں:

مديني جا ڄام، سُڻ منهنجا سَڏڙا،
آهيان تنهنجي سام، سگهو رسج سير ۾.

مديني جا ڌڻي، سُڻ منهنجا سَڏڙا،
تنهنجي آه تڻي، ٻي ڪنڌي ساريان ڪانه ڪا.

مديني جا شاه، سُڻ منهنجا سَڏڙا،
ڪارڻ لڳ الله، سگهو سرج سُپرين.

مديني جا شير، سڻ منهنجا سڏڙا،
ڀر مبارڪ پير، عاصِي تنهنجي آسري.

مديني جا گهوٽ، سُڻ منهنجا سَڏڙا،
ڪج محمد! موٽ، عامي تنهنجي آسري.

مديني جا مير، سُڻ منهنجا سَڏڙا،
سَرَڻ تنهنجي سِير، تون پار لنگهائين پَيڙ

مخدوم محمد ہاشم ٹھٹوی قادری سندھی، 1174ھ

اي خاصا دوست خدا جا حضرت هٿ وٺيج

تو ريءَ تاري ناھ ڪا يا رسول رسيج

فريادون فقير جون سونهارا سڻيج

زاريون هن ضعيف جون والي ورنائيج

ڏسي حال حقير جو عربي آڌر ڏيج

سندا سائل سپرين سرور سوال سڻيج

مداحيءَ کي مصطفيٰ دوست دلاسا ڏيج

ماندي هن مسڪين جو غني غور ڪريج

مجتبيٰ محتاج تي فضل فرمائيج

مون تي مرسل مهر جا حضرت هٿ رکيج

 آخري شعر

حرمت حبيب هاشميءَ جي باري بخشائيج

قادر ڪلمي سان ڪري هادي هلائيج

خواجہ گل محمد ہالائی نقشبندی قادری سندھی، 1271ھ

سندھ کے مشہور بزرگ اور شاعر حضرت گل محمد ہالائی نقشبندی قادری رحمۃ اللہ علیہ، جو حضرت خلیفہ محمود نظامانی نقشبندی قادری رحمۃ اللہ علیہ کے مرید و خلیفہ تھے، سندھی زبان میں اپنے آقائے دو جہاں صلّ اللہ علیہ وسلم سے اس طرح امداد کی التجا کرتے ہیں:

سَڏ سُڻي سَيَّد سَچا سيگهون رَسيج

جو کهي دشمن دَڙي دوٻي دَسيج

کَرُ کهي تو هَڻُ کلو کر کي کڻي

جي ڦُرئا کر ٽول سي کر کان کَسيج

واٽ وٿڙي مُون هَٿان اَوَجهڙ پِئس

واٽ تي چاڙهي سَنئون ڏَسڙو ڏَسيج

تون ڪَرامَت جو ڪَڪَر مَحبَت جو مينهن

رَحمَتي ريلو ڪري مون تي وَسيج

پِرت ۾ عاشق پَچي ٿِئا تُنهنجي پاه

پَرَ ڪنان پاسو ڪَري پنهنجا پَسيج

بُلبلون عاشق گُلن تي، توتي گل،

گُل اچي گُلزار ۾ گُل سان هسيج

This entry was posted in Urdu and tagged . Bookmark the permalink.

2 Responses to استغاثہ بدرگاہ رسالت مآب صلّ اللہ علیہ وسلم، عربی، فارسی اور دیگر زبانوں میں

  1. faraz says:

    Excellent
    May Allah bless those who have published this, and above are the blessed souls, may Allah grant us Hidayah through these blessed souls. Ameen.

  2. Bergazeda says:

    Excellent
    May Allah bless those who have published this, and above are the blessed souls, may Allah grant us Hidayah through these blessed souls. Ameen.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *